Posts

Showing posts with the label قدرت اللہ شہاب

Nafsanay, Qudratullah Shahab, Fiction, افسانے, قدرت اللہ شہاب, نفسانے,

Image
 Nafsanay, Qudratullah Shahab , Fiction, افسانے, قدرت اللہ شہاب , نفسانے, لینے دینے کے بیوپار میں یا تو بنیئے کو مہارت ہے یا ملا اور پنڈت کو، دونوں کے خون میں اس ہاتھ دے اس ہاتھ لے کی رمق ہے، اگرچہ ان کا لینے والا ہاتھ ان کے دینے والے ہاتھ سے عموماً درازی مائل ہوتا ہے۔ لیکن یہ جو ایک معلق قسم کے لے دے انسانی سرشت میں گویا ازل سے موجزن ہے، اسے نہ لینے سے سروکار ہے نہ دینے سے البتہ تو تو میں میں والی گردان میں جتنی بامحاورہ شگفتیاں نکل سکتی ہیں، وہ بے شک اسی ایک جذبے کے محتاج ہیں۔ غالباً ہماری پہلی کے دے کا آغاز اس وقت ہوا جب اماں حوا اور باوا آدم بیک بینی و دوگوش جنت کے باغیچوں سے گول کئے گئے۔ میاں ابلیس کے ہونٹوں پر ضرور مسکراہٹ پھیل گئی ہوگی، جب اس کے ٹھکرائے ہوئے خاکی مسجود کی زبان پہلی بار لذت ممنوعہ Download

Maa Ji, Qudratullah Shahab, Fiction, ماں جی, قدرت اللہ شہاب, افسانے

Image
 Maa Ji, Qudratullah Shahab, Fiction, ماں جی, قدرت اللہ شہاب, افسانے منشی پریم چند سے لے کر اب تک کے افسانہ نگاروں کے درمیاں انداز بیان کی متعدد مماثلتیں موجود ہیں۔ اس کا یہ مطلب ہر گز نہیں کہ اس دور کے افسانہ نگاروں کی انفرادیتیں آپ میں اس طرح پیوست ہیں کہ ایک دوسرے سے الگ پہچاننا دشوار ہے۔ میں صرف یہ کہ رہا ہوں کہ ایک ہی دور میں سانس لینے اور ایک ہی قسم کے مسائل سے نمٹنے کی وجہ سے ان افسانہ نگاروں کے اسلوب نگارش کی سرحدیں بعض مقامات پر ایک دوسرے کو چھوتے ہوئی گذر جاتی ہیں۔ قدرت اللہ شہاب بھی افسانہ نگاروں کی اسی پود سے تعلق رکھتا ہے جن کے مسائل یکساں تھے اور جو حقیقت پسندی کی راہ سے ان مسائل سے نمٹتے تھے، مگر کم سے کم "ماں جی" کے مطالعہ سے تو مجھ پر یہ حیرت انگیز انکشاف ہوا ہے کہ شہاب کا انداز بیان اپنے ہم عصروں میں سے کسی سے مماثل نہیں ہے۔  Download

Ya Khuda, Qudratullah Shahab, Short Stories, یا خدا, قدرت اللہ شہاب, مختصر کہانی

Image
  It's a good 'long short story' or a novelette by Qudratullah Shahab who also served in Pakistan's early bureaucratic offices. What most progressive writers and critics don't find impressive in Ya Khuda is his choice of Muslim characters as victims although exploited equally or even more by the Muslim opportunists as well. The story written in 1948 might have been influenced by the personal tragedy of the writer who lost family members in the Hindu-Muslim riots and who was holding high government offices. What needs to be appreciated however is that even his sense of patriotism is not distinct from humane values. He poses tough questions in front of the proud citizens of the newly established state. A perspective missed by the critics can be of feminism as Ya Khuda mainly focuses on the exploitation of female victims who were raped and abused on both sides of the border! If you have read prominent Urdu short stories on partition and violence from the progressive c

Shahab Nama by Qudratullah Shahab - شہاب نامہ از قدرت اللہ شہاب

Image
  Shahab Nama is an Urdu autobiography by renowned Pakistani writer and diplomat Qudrat Ullah Shahab . It is an eyewitness account of the background of the subcontinent's Muslims' independence movement and of the demand, establishment and the history of Pakistan. The 1248-page long book was published posthumously in 1987, shortly after Shahab's death. It is his most notable publication and a bestselling Urdu autobiography. It covers his childhood, education, work life, admission to Imperial Civil Service, thoughts about Pakistan and his religious and spiritual experiences. Mushfiq Khwaja, a close friend of Shahab, was one of those who criticized the book for its exaggerations, inaccuracies and stretched truths. Considering Shahab's reputation as a man of integrity and a Sufi, Dawn wrote that "he mainly told the truth but there were things that he stretched." شہاب نامہ قدرت اللہ شہاب کی خودنوشت کہانی ہے۔ شہاب نامہ مسلمانان برصغیر کی تحریک آزادی کے پس منظر، مطا