Posts

Showing posts with the label رسالہ

Tuhfa Haiderabad Dakkan January 1955, Magazine, تحفہ حیدرآباد دکن, رسالہ, طب, Medicine,

Image
 Tuhfa Haiderabad Dakkan January 1955, Magazine, تحفہ حیدرآباد دکن, رسالہ, طب, Medicine, آسمان، زمین اور پہاڑوں سے امانت الہی کو اٹھانے سے قطعی انکار کیا۔ لیکن جہول انساں نے اس بار امانت کو اٹھا ہی لیا۔ اسے انجام کی پرواہ نہیں۔ یہی انسانی فطرت اور آئین قدرت ہے، ازل سے ناعاقبت اندیش انسان یہی کرتا رہا ہے اور کرتا رہے گا۔ راقم بھی اس قانون قدرت سے باہر نہیں۔ بے سروسامان ایک ساکت و جامد تضاد میں انجام سے بے پرواہ ہو کر اس کا بھاری بوجھ اپنے ناتواں کندھوں پر اٹھالیا۔ ماہنامہ "تحفہ" ہی بجائے خود ایک بڑی ذمہ داری اور ایک بھیانک مہم تھی۔ اس پر سالانہ کا اعلان بس ہماری ہمت کا متحان تھا۔ موضوع نادر، منزل کی راہ کٹھن، قدم قدم پر پر خطر گھاٹیاں، ہمت شکن ماحول مگر ہم خدا پر بھروسہ کر کے کام شروع کر دیا۔ بارگاہ رب العزت میں یہ گنہگار ہدیہ تبرک پیش کرتا ہے کہ اس نے اس ضعیف و کمزور کو عزم راسخ عطا کیا اور اس اہم ا ور مشکل کام کو اپنے فضل کرم سے انجام تک پہنچوایا۔ مضامین میں ممکن ہے خامیاں ہوں۔ یورپ میں بھی ترقی ہوئی تو اس میں درد مندوں کا خلوص کار فرما تھا۔ اور ہمیشہ عوام ہی کی گود میں علم

Amrat Sagar 1878, امرت ساگر (1878), Munshi Nowl Kishore, منشی نول کشور, طب, Medicine, رسالہ, Magazine,

Image
 Amrat Sagar 1878, امرت ساگر (1878), Munshi Nowl Kishore, منشی نول کشور, طب, Medicine, رسالہ, Magazine, ہزارہا شکر اوس خداوند تعالی کا ہے جسنے اس ناچیز جسم کو پیدا کیا اور اوسکی افادیت کے لئے کیسے عمدہ علم پیدا کئے۔ طرح طرھ کے درد کو عارضہ کہتے ہیں وہ عارضے دو قسم کے ہیں۔ ایک باطنی دوسرا جسمانی۔جو دل میں رہے وہ باطنی اور جو جسم میں رہے وہ جسمانی کہلاتا ہے۔ یہ دونوں بدن میں کسی طرھ کی بد پرھیزی یا بادو صفرابلغم کے زور یا غذا اور آسائش میں تفرقہ کے سبب سب بیماریوں کو پیدا کرتے ہیں۔ اور یہ باد وصفرا بلغم کئی قسم کی بد پرھیزی سے بگڑے تھکے بدن کوبگاڑتے ہیں اور یہی اچھی طرھ پرھیز سے استعمال کرنے سے بدن میں تازگی لاتے ہیں۔ سب بیماریاں نیچے لکھی چھے طریقوں سے پہچانی جانی چاہئیں۔ نبض کی آزمائش۔ پیشام کی آزمائش اور عارضوں کے احوال شروع سے تین قسم کے ہیں اور عارضوں کی تشخیص سے بھی بیماروں کا حال معلوم ہوتا ہے۔  نبض کی آزمائش کا بیان: مرد بیمار ہو تو اسکے داہنے ہاتھ کی اور عورت بیمار ہو تو اسکے بائیں ہاتھ کی نبض دیکھیں مگر بید کو لازم ہے کہ ایک دل ہو کر اطمینان سے نہایت سوچ سمجھ بیپار کے ہاتھ کو ہ